12

حکومت 300 یونٹ استعمال کرنے والے بجلی صارفین کو ریلیف دینے پر غور کر رہی ہے۔

وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے بتایا ہے کہ 200 سے 300 یونٹ استعمال کرنے والے بجلی صارفین کو ریلیف دینے پر غور کرنے کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جبکہ 56 فیصد بجلی استعمال کرنے والوں سے فیول ایڈجسٹمنٹ چارجز نہیں لیے جائیں گے۔

جمعہ کو اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ وزیر اعظم شہباز شریف نے اس معاملے کو دیکھنے کے لیے ایک کمیٹی بنائی ہے کہ 200 سے 300 یونٹ استعمال کرنے والے صارفین کو کس طرح سہولت فراہم کی جا سکتی ہے۔

آج ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیراعظم شہباز شریف نے گھنٹے میں 200 یونٹس تک استعمال کرنے والے صارفین کے لیے اعلان کردہ ریلیف پر عملدرآمد کی ہدایت کی۔ انہوں نے کہا کہ مقررہ مدت میں اعلان کردہ ریلیف کے مطابق بجلی کے بلوں میں کمی کی جائے گی۔ انہوں نے ڈسکوز کے عملے کو بلوں کی درستگی کے لیے چوبیس گھنٹے کام کرنے کی بھی ہدایت کی۔

مفتاح نے کہا کہ بجلی صارفین کو مئی کے مہینے کے فیول ایڈجسٹمنٹ چارجز مل گئے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ مئی میں پیدا ہونے والی بجلی بہت مہنگی تھی۔

انہوں نے واضح کیا کہ جن لوگوں نے ابھی تک بجلی کے بل ادا نہیں کیے ہیں انہیں بغیر فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کے درست بل جاری کیے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ پہلے ہی بل ادا کر چکے ہیں، ستمبر کے بلوں میں ایڈجسٹمنٹ کی جائے گی۔

انہوں نے یقین دلایا کہ حکومت 56 فیصد بجلی صارفین سے فیول ایڈجسٹمنٹ چارجز نہیں لے گی۔

آئی ایم ایف کے قرضہ پروگرام پر وزیر خزانہ نے امید ظاہر کی کہ فنڈ جلد ہی قسط جاری کر دے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو 4 بلین ڈالر کے فنانسنگ گیپ کو پورا کرنے کی یقین دہانی ملی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان نے آئی ایم ایف کی تمام ضروریات پوری کر دی ہیں اور ملک کو اگلی قسط پیر کو ہونے والے بورڈ میٹنگ کے بعد ملے گی۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات پاکستان میں 2 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گا جبکہ سعودی عرب موخر ادائیگی پر ایک ارب ڈالر کا تیل فراہم کرے گا۔

انہوں نے یہ بھی انکشاف کیا کہ قطر پاکستان میں 3 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گا۔

مفتاح نے قطر کی جانب سے روزویلٹ ہوٹل اور پی آئی اے کی خریداری کی قیاس آرائیوں کو مسترد کردیا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اس سلسلے میں کوئی بات چیت نہیں ہوئی ہے۔

تاہم وزیر خزانہ نے واضح کیا کہ قطر نے ہوائی اڈوں کی طویل مدتی لیز اور انتظامی کنٹرول اور بندرگاہ پر کچھ سہولیات کی تعمیر میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ قطر نے ایل این جی پلانٹس اور سولر پاور پراجیکٹس میں بھی دلچسپی ظاہر کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان 8000 میگاواٹ کے شمسی توانائی کے منصوبے لگانے کا ارادہ رکھتا ہے جس سے بجلی کی قیمتوں کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔

مفتاح نے یہ بھی کہا کہ قطر اسٹاک مارکیٹ میں بھی سرمایہ کاری کرسکتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں