17

وزیراعظم کے معاون نواز شریف کے جعلی ویکسینیشن کیس کے پیچھے مریم کی سازش کو دیکھ رہے ہیں۔

وزیر اعظم کے معاون شہباز گل نے ہفتے کے روز کہا کہ مریم اور کچھ اراکین پارلیمنٹ نے نواز شریف کے ہسپتال میں داخل ہونے والے جعلی ویکسینیشن کے داخلے کے اعداد و شمار کو خود ساختہ جلاوطن کرنے کی سازش کی۔

نیوز ایچ ڈی ٹی وی چینل کے مطابق اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیراعظم کے معاون خصوصی شہباز گل نے کہا کہ جعلی ویکسینیشن کیس میں کم از کم چھ افراد ملوث ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملک دہشت گردی اور کورونا وائرس کی وبا کے خلاف لڑ رہا ہے اور جعلی ویکسینیشن انٹری کیس کا مقصد پاکستان میں ویکسینیشن کے عمل کو غلط دکھانا ہے۔

شہباز گل نے یہ بھی کہا کہ ویکسینیشن کی جعلی رجسٹریشن کی خبر کو مسلم لیگ (ن) نے بھارتی چینلز اور پاکستانی میڈیا میں کوٹ خواجہ سعید ہسپتال میں اپنے بھرتی شدہ شخص کے ذریعے ملک کو بدنام کرنے کی سازش کے ذریعے کھلایا۔

سازش میں ملوث ناموں کا انکشاف کرتے ہوئے وزیراعظم کے معاون نے کہا کہ اس میں چوہدری شہباز ، ابوالحسن ، عادل رفیق اور نوید نے کردار ادا کیا۔

وزیراعظم کے معاون نے بتایا کہ شاد باغ کے رہائشی عادل رفیق کو ایم پی اے چوہدری شہباز نے نواز لیگ کے سابقہ ​​دور حکومت میں ہسپتال میں بھرتی کیا تھا۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ پاکستان کو بدنام کرنے کے لیے مسلم لیگ (ن) نے سب سے پہلے جعلی ویکسین کی خبریں پھیلائیں جبکہ نوید نامی شخص جو جعلی ویکسینیشن کے اندراج میں بھی ملوث تھا ملک چھوڑ کر فرار ہو گیا۔

شہباز گل نے مریم نواز کے بیان کے بعد الزام لگایا کہ بھارتی میڈیا نے پاکستان کو دنیا بھر میں بدنام کرنے کے لیے یہ مسئلہ اٹھایا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں